Skip to content
For centuries Eastern heart and intellect
have been absorbed in the question –
Does God exist?
I propose to raise a new question – new,
that is to say, for the East –
Does man exist?

~ Iqbal, Stray Reflections

RECENTLY ADDED

بانگِ درا 82: ایک شام

بانگِ درا 81: ایک شام

بانگِ درا کی نظم ایک شام 1907ء میں لِکھی گئی۔ یہ نظم علامہ اقبال نے اپنے قیامِ جرمنی کے دوران دریائے نیکر کے کِنارے بیٹھ کر کہی۔
تنہائی

بانگِ درا 82: تنہائی

علامہ اقبال کی نظم تنہائی کا شمار عموماً قدرت کی تعریفی شاعری میں کیا جاتا ہے، البتہ یہ تشریح اِس کا ایک الگ نظر سے تجزیہ پیش کرتی ہے۔

UPDATES

غلاموں کے لیے

ضربِ کلیم 163: غلاموں کے لیے

نظم ”غلاموں کے لیے“ میں علامہ اقبال فرماتے ہیں کہ اگر کسی غلام کو آزادی کی تمنّا ہو تو اُسے چاہیے کہ اپنے اندر ”ذوقِ یقین“ پیدا کرے۔
دین و تعلیم

ضربِ کلیم 79: دین و تعلیم

اِس نظم میں اقبالؔ نے دین اور تعلیم سے متعلق بعض حقائق بیان کیے ہیں اور اِس میں شک نہیں کہ اِن پر غور کرنے سے حکیمِ مشرق کی ژرف نگاہی کا اعتراف کرنا پڑتا...
Bal e Jibril 152 Falsafa o Mazhab

بالِ جبریل 152: فلسفہ و مذہب

فلسفہ اور مذہب کے مابین کیا فرق ہے۔ اپنے مقاصد کے اعتبار سے یہ تقابلی سطح پر تضادات کے شکار ہیں۔ ان کے مقاصد میں کیا فرق ہے؟ اس کا تجزیہ کیا جائے تو جاننے...
Zarb e kaleem 35 Shikast

ضربِ کلیم 35: شکست

نظم ”شکست“ میں اقبالؔ نے مسلمانوں کو شکست کا حقیقی مفہوم سمجھایا ہے اور اُن وجوہات سے آگاہ کیا ہے جن کی بنا پر قومیں میدانِ زندگی میں شکست سے دوچار ہوتی...
Baang e Dara 79 Insan

بانگِ درا 79: انسان

نظم ”انسان“ میں اقبالؔ نے یہ نُکتہ واضح کیا ہے کہ کائنات کا ہر ذرّہ ہر وقت اپنی نمود میں مشغول و مصروف ہے، صرف ایک انسان ہے جو ذاتی نمود کو پسِ پُشت ڈال...
Zarb e Kaleem 62 Mard e Musalman

ضربِ کلیم 62: مردِ مُسلمان

نظم ”مردِ مُسلمان“ میں اقبالؔ نے مردِ مومن کی صفات بیان کی ہیں۔ مردِ مسلمان چونکہ صفاتِ ایزدی (اللہ تعالی کی صفات) کا حامل ہوتا ہے، اس لیے وہ بھی ہر لمحہ...
Zarb e kaleem 10 Musalman Ka Zawaal

ضربِ کلیم 10: مُسلمان کا زوال

اِس نظم کا خلاصہ یہ ہے کہ اقبالؔ کی رائے میں مُسلمان کے زوال کا باعث یہ نہیں کہ وہ بے زر (بے دولت) ہے، بلکہ یہ ہے کہ اُس میں شانِ فقر نہیں پائی جاتی۔
Zarb e Kaleem 6 Tan Ba Taqdeer

ضربِ کلیم 6: تن بہ تقدیر

اِس نظم میں علامہ فرماتے ہیں کہ قرآن تو مسلمانوں کو مہ و پروین کی تسخیر کا حکم دیتا ہے لیکن آج کا غلام ذہنیت مسلمان ترکِ دُنیا اختیار کیے ہوئے ہے، یہ سب...
Baang e Dara 98 Husn o Ishq

بانگِ درا 69: حُسن و عشق

یہ نظم بظاہر رومانی جذبے کی حامل معلوم ہوتی ہے لیکن علامہ نے اس میں درحقیقت تصوّف کے اس نظریہ کی تبلیغ کی ہے کہ محبت ہی تخلیقِ عالم کی بنیادی عِلّت اور...
Baang e Dara 126 Dua

بانگِ درا 126: دُعا

نظم ”دعا“ علامہ نے اُس دور میں کہی تھی جب ایران اور ترکی مصیبتوں کا شکار تھے اور دنیا کے دوسرے مُلک نصاری سے سازباز کر رہے تھے۔